نازشِ کون ومکاں ہے سنتِ خیرالوری


13-04-2019 | انؔیس بھٹکلی

نازشِ کون ومکاں ہے سنتِ  خیر الورٰیؐ

نکہتِ ہفت آسماں ہے سنت  خیر الورٰیؐ

منزلِ امن و اماں ہے سنتِ  خیر الورٰیؐ

راہِ حق راہِ جناں ہے سنتِ  خیر الورٰیؐ

سنتوں سے عشق کا دعوی ہی دعوی ہے مگر

زندگی میں اب کہاں ہے سنتِ خیر الورٰیؐ

معصیت کی دھوپ کے آزار مانا کم نہیں

روح پرور سائباں ہے سنتِ   خیر الورٰیؐ

 

رات کی تاریکیاں منہ دیکھتی ہیں اے انؔیس

چار جانب ضوفشاں ہے سنتِ خیر الورٰیؐ




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
نازشِ کون ومکاں ہے سنتِ خیرالوری
تصور کے دریچوں میں حسیں دنیا سجاتا ہے