نہ پوچھو کہ کیا ہیں ہمارے محمدؐ


09-12-2016 | بہزادؔ لکھنوی

نہ پوچھو کہ کیا ہیں ہمارے محمدؐ

 

شہِ دوسرا ہیں ہمارے محمدؐ

انہوں نے بتائیں ہمیں حق کی باتیں

 

رسولِ خدا ہیں ہمارے محمدؐ

نہ کیوں ان پہ صدقے ہو سارا زمانہ

 

حقیقت نما ہیں ہمارے محمدؐ

نہیں  بات خالی کسی کی بھی جاتی

 

بڑے پُر عطا ہیں ہمارے محمدؐ

 

ہمیں خوف محشر کا بہزادؔ کیوں ہو

حبیبِ خدا ہیں ہمارے محمدؐ




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
فغاں شکارِ اثر ہو گئی تو کیا ہوگا؟
اُن کوبت سمجھا تھا یا اُن کو خدا سمجھا تھا میں
نہ پوچھو کہ کیا ہیں ہمارے محمدؐ