مضطرب ہوں ، قرار دے اللہ


19-11-2016 | ابن حسؔن بھٹکلی

مضطرب ہوں   ،    قرار     دے      اللہ

میری    قسمت     سنوار     دے      اللہ

سانس    در   سانس     دم    اٹکتا    ہے

 

چند   سانسیں   اُدھار      دے      اللہ

ڈالی     ڈالی      خزاں    رسیدہ    ہے

 

موسمِ     گل      بہار       دے       اللہ

دھیرے دھیرے مری اعانت کر

 

یعنی     ترتیب     وار       دے      اللہ

میری خواہش ہے خواہشیں کم ہوں

 

نفس      پر     اختیار       دے      اللہ

تیری   مرضی    کے  جو     مطابق  ہو

 

ایسا      جذبہ     اُبھار       دے      اللہ

شب   کی   تاریکیوں     کا    غلبہ     ہے

 

صبحِ     نو    کو    نکھار       دے      اللہ

خدمتِ      خلق      کی      تمنا    ہے

  نعمتیں    بے      شمار       دے      اللہ

تیری   رحمت    کا    منتظر  ہوں   میں

  کچھ   نہ   کچھ   بار    بار       دے      اللہ
 

جو     بھی     ابنِ     حسنؔ     نے     مانگا     ہے

ائے      مرے      کردگار      دے     اللہ




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
حسرتیں اتنی زیادہ ہیں کہ بس اب کیا کہیں
دسترس میں ہو نہ ہو کچھ اور بس یوں ہی سہی
کسی کا ساتھ نبھانا تھا اور کیا کرتا
خود پہ نافذ کیجئے کردار سازی کا عمل
زباں پر جب حبیبِ کبریا کا نام آتا ہے