نغماتِ ازل بیدار ہوئے پھر بربطِ دل کے تاروں میں


08-07-20159 | محمد حسین فطرتؔ

نغماتِ ازل بیدار ہوئے پھر بربطِ دل کے تاروں میں

تکبیر کی آوازیں گونجیں یثرب کے حسیں کہساروں میں

ائے رشکِ مسیحا ،فخرِ زماں،تو ہی ہے علاجِ دردِ نہاں

مجھ کو بھی پِلا داروئے شفا، میں بھی ہوں ترے بیماروں میں

اُس شان ِ کرم  کا کیا کہیئے،... دنیا کو مسخر جس نے کیا

یہ وصف کہاں شمشیروں میں ، یہ بات کہاں تلواروں میں

مستانہ ہواؤں کے جھونکے، نذرانہ عقیدت کا لائے

شبنم کے گہر تقسیم ہوئے ، کچھ پھولوں میں کچھ خاروں میں

پھولوں کی زباں پر ذکر ترا، غنچوں کے لبوں پر مدح تری

ائے حسنِ ازل کے شیدائی،... چرچا ہے ترا مہ پاروں میں

 

مومن کی نگاہوں میں فطرتؔ ، کہسارِ عرب ہے  رشکِ جناں

پھولوں کا تبسم رقصاں ہے،.... فردوس بداماں خاروں میں 




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
درسِ اتحادِ ملت
میں سوچ رہا ہوں گلشن کی تزئین کا ساماں کیا ہوگا
کنارے پہ دریا کے مردہ پڑا تھا
ارباب زر کےمنہ سے جب بولتا ہے پیسہ
ہم شانہ کشِ زلفِ گیتی،ترانہ جامعہ اسلامیہ بھٹکل