اگر بزمِ انساں میں عورت نہ ہوتی


12-04-2016 | ساغرؔ صدیقی

اگر بزمِ انساں میں عورت نہ ہوتی

خیالوں کی رنگین ۔۔ جنت نہ ہوتی

ستاروں کے دلکش فسانے نہ ہوتے

بہاروں کی نازک ۔۔ حقیقت نہ ہوتی

جبینوں پہ ۔۔ نورِ مسرت نہ ہوتا

نگاہوں میں شانِ مروت نہ ہوتی

گھٹاؤں کی آمد کو ۔۔ ساون ترستے

فضاؤں میں بہکی ۔۔ بغاوت نہ ہوتی

فقیروں کو ۔۔ عرفانِ ہستی نہ ملتا

عطا زاہدوں کو ۔۔ عبادت نہ ہوتی

مسافر ۔۔ سدا منزلوں پر ۔۔ بھٹکتے

سفینوں کو ساحل کی قربت نہ ہوتی

ہر اک پھول کا رنگ پھیکا سا ہوتا

نسیمِ بہاراں میں ۔۔ نکہت نہ ہوتی

خدائی ۔۔ کا انصاف ۔۔ خاموش ہوتا

سنا ہے کسی کی ۔۔۔ شفاعت نہ ہوتی




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
حادثے کیا کیا تمہاری بے رخی سے ہوگئے
چراغِ طور جلاؤ ، بڑا اندھیرا ہے
ساقی کی اک نگاہ کے افسانے بن گئے
اگر بزمِ انساں میں عورت نہ ہوتی
میں تلخیٔ حیات سے گھبرا کے پی گیا