حادثے کیا کیا تمہاری بے رخی سے ہوگئے


03-07-2019 | ساغرؔ صدیقی

حادثے کیا کیا تمہاری بے رخی سے ہوگئے

ساری دنیا کے لیے ہم اجنبی سے ہوگئے

کچھ تمہارے گیسوؤں کی برہمی نے کر دئیے

کچھ اندھیرے میرے گھر میں روشنی سے ہوگئے

بندہ پرور! کھل گیا ہے آستانوں کا بھرم

آشنا کچھ لوگ رازِ بندگی سے ہوگئے

گردشِ دوراں، زمانے کی نظر، آنکھوں کی نیند

کتنے دشمن ایک رسمِ دوستی سے ہوگئے

زندگی آگاہ تھی صیّاد کی تدبیر سے

ہم اسیرِ دامِ گل اپنی خوشی سے ہوگئے

اب کہاں اے دوست چشمِ منتظر کی آبرو

اب تو اُن کے عہد و پیماں ہر کسی سے ہوگئے

 

 

ہر قدم ساغرؔ نظر آنے لگی ہیں منزلیں

مرحلے کچھ طے مری آوارگی سے ہوگئے




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
اگر بزمِ انساں میں عورت نہ ہوتی
ہے دعا یاد مگر حرفِ دعا یاد نہیں
پھولوں کو آگ لگ گئی نغمات جل گئے
گل ہوئی شمعِ شبستاں چاند تارے سو گئے
حادثے کیا کیا تمہاری بے رخی سے ہوگئے