کوئی ہے شیشہ و شراب میں مست


11-04-2016 | منیرؔ نیازی

کوئی ہے شیشہ و شراب میں مست

کوئی ہے لذتِ شباب میں مست

 

مبتلا ہیں سبھی ۔۔۔۔ کہیں نہ کہیں

میں بھی ہوں اپنے خواب میں مست




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
کوئی ہے شیشہ و شراب میں مست
ہری ٹہنیوں کے نگر پر گئے
اُسی کا حکم جاری ہے زمینوں آسمانوں میں