کہاں میں بندۂ عاجز کہاں حمد و ثنا تیری


13-08-2015 | ابن حسؔن بھٹکلی

کہاں میں۔۔۔ بندۂ عاجز۔۔۔ کہاں حمد و ثنا تیری

حدودِ عقل سے بڑھ کر ہے عظمت ائے خدا تیری

 

تو خالق ہے تو رازق ہے ۔۔ تو باسط ہے تو قادر ہے

ثنا خوانی میں۔۔ ہیں سرشار۔۔ یہ ارض و سما تیری 

 

نمایاں ہے ترا جلوہ ۔۔۔بہاروں چاند تاروں میں

منور کر رہی ہے ۔۔۔۔۔ سارے عالم کو ضیا تیری

 

تو ہی تو ہے فقط تو ہی ۔۔۔۔ تو ہی اول سے آخر تک

کہ اک اک ابتدا تیری ، ہے اک اک انتہا تیری

 

کوئی اک سانس بھی مرضی سے اپنی لے نہیں سکتا

کسی کا کچھ نہیں یارب ۔۔۔۔۔ فنا تیری ، بقا تیری

 

بیاں ابنِ حسؔن ۔۔۔۔ کیسے کرے لطف و کرم تیرا

خزاں تیری یہ گل تیرے ، فضا تیری ،ہوا تیری




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
خود پہ نافذ کیجئے کردار سازی کا عمل
دسترس میں ہو نہ ہو کچھ اور بس یوں ہی سہی
زباں پر جب حبیبِ کبریا کا نام آتا ہے
ایسا لگتا ہے چمن میں پھر بہار آنے کو ہے
کسی کا ساتھ نبھانا تھا اور کیا کرتا