سلام ائے صبحِ کعبہ السلام ائے شامِ بت خانہ


20-10-2016 | سیمابؔ اکبرآبادی

سلام ائے صبحِ کعبہ السلام ائے شامِ بت خانہ

تو چمکا ۔۔ بزمِ آزر میں ۔۔۔ بہ اندازِ خلیلانہ

حریمِ پاک تیرا وہ ۔۔۔ بلند ایواں حقیقت کا

جہاں جبریلؑ بھی ناچیز ۔۔ سا ہے ایک پروانہ

کہیں تو زندگی پیرا ۔۔۔ بہ اندازِ لبِ عیسیٰؑ

کہیں تو خطبہ فرما ۔۔۔ اوجِ طائف پر کلیمانہ

فراغِ آفرینش ہے تو ہے تیرے ہی جلوؤں سے

کہیں تو شمعِ محفل ہے ۔۔ کہیں تو نورِ کاشانہ

کچھ اس انداز سے جلوہ نمائی تو نے فرمائی

کہ ہر ذرہ ۔۔۔ زمیں کا ہوگیا تیرا ہی دیوانہ

یہ دنیا تیری نظروں میں مثالِ نقطۂ ناقص

یہ عالم خرمنِ عرفاں کا تیرے صرف اک دانہ

مجھے معلوم ہے ۔۔ رازِ غلامی اہلِ عالم کا

ہے آئینِ سیاست سے ترے ، ذہن ان کا بیگانہ

 

اگر پیرَو ۔۔ ترا یہ ۔۔۔ عالمِ ایجاد ہو جائے

تو اک انساں ہی کیا ، کل کائنات آزاد ہو جائے




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
سلام ائے صبحِ کعبہ السلام ائے شامِ بت خانہ
چمک جگنو کی برقِ بے اماں معلوم ہوتی ہے
نسیمِ صبح گلشن میں گلوں سے کھیلتی ہوگی