نہ اب مسکرانے کو جی چاہتا ہے


31-07-2016 | جگرؔمرادآبادی

نہ اب مسکرانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے

نہ آنسو ۔۔ بہانے کو ۔۔ جی چاہتا ہے

ستاتے نہیں وہ ۔۔ تو اُن کی طرف سے

خود ، اپنے ستانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے

کوئی مصلحت روک دیتی ہے ۔۔ ورنہ

پلٹ دیں زمانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے

تجھے ۔۔ بھول جانا تو ہے ۔۔ غیر ممکن

مگر ، بھول جانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے

تواضع کر ائے عشق! چند آنسؤں سے

بہت ۔۔ مسکرانے کو ۔۔ جی چاہتا ہے

بہت دیر تک چھپ کے تیری نظر سے

تجھے ۔۔ دیکھ پانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے

تری آنکھ کو بھی جو بے خواب کردے

وہ فتنہ ۔۔ جگانے کو ۔۔ جی چاہتا ہے

حسیں تیری آنکھیں ، حسیں تیرے آنسو

یہیں ڈوب جانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے

 

جگرؔ اب تو وہ بھی یہ کہتے ہیں مجھ سے

ترے ناز اُٹھانے کو ۔۔۔ جی چاہتا ہے




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
دردِ غمِ فراق کے یہ سخت مرحلے
ہزاروں قربتوں پر یوں مرا مہجور ہوجانا
نہیں جاتی کہاں تک فکرِ انسانی نہیں جاتی
ساقی کی ہر نگاہ پہ بل کھا کے پی گیا
کبھی شاخ و سبزہ و برگ پر کبھی غنچہ و گل و خار پر