ادا آئی، جفا آئی، غرور آیا، حجاب آیا


26-05-2016 | نوحؔ ناروی

ادا آئی ۔۔ جفا آئی ۔۔۔ غرور آیا ۔۔ حجاب آیا

ہزاروں آفتیں لے کر ۔۔۔ حسینوں کا شباب آیا

شبِ غم کس طرح گزری، شبِ غم اس طرح گزری

نہ تم آئے، نہ چین آیا، نہ موت آئی، نہ خواب آیا




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
ادا آئی، جفا آئی، غرور آیا، حجاب آیا