رات جی کھول کے پھر میں نے دعا مانگی ہے


02-05-2016 | کلیم احمد عاجزؔ

رات جی کھول کے پھر میں نے دعا مانگی ہے

اور ایک چیز ۔۔۔ بڑی بیش بہا مانگی ہے

اور وہ چیز نہ دولت نہ مکاں ہے نہ محل

تاج مانگا ہے ۔۔ نہ دستار و قبا ۔۔ مانگی ہے

نہ تو قدموں تلے ۔۔۔ فرشِ گہر مانگا ہے

اور نہ سر پہ ۔۔۔ کُلہِ بالِ ہما ۔۔ مانگی ہے

نہ شریکِ سفر ۔۔ و زادِ سفر ۔۔۔ مانگا ہے

 نہ صدائے جرس و بانگِ درا ۔۔۔ مانگی ہے

نہ سکندر کی طرح ۔۔ فتح کا ۔۔ پرچم مانگا

اور نہ مانندِ خضر ۔۔۔ عمرِ بقا ۔۔ مانگی ہے

نہ کوئی عہدہ ، نہ کرسی نہ لقب مانگا ہے

نہ کسی خدمتِ قومی کی ۔۔ جزا مانگی ہے

نہ تو مہمانِ خصوصی کا ۔۔ شرف مانگا ہے

اور نہ محفل میں کہیں صدر کی جا مانگی ہے

میکدہ مانگا ، نہ ساقی ، نہ گلستاں، نہ بہار

جام و ساغر ، نہ مئے ہوش ربا مانگی ہے

محفلِ عشق ۔۔ نہ سامانِ طرب مانگا ہے

چاندنی رات ۔۔ نہ گھنگھور گھٹا مانگی ہے

نہ تو منظر کوئی شاداب و حسیں مانگا ہے

نہ صحت بخش کوئی آب و ہوا ۔۔ مانگی ہے

بانسری مانگی، نہ طاؤس، نہ بربط نہ رباب

نہ کوئی ۔۔۔ مطربۂ شیریں نوا ۔۔ مانگی ہے

چین کی نیند ۔۔ نہ آرام کا پہلو ۔۔ مانگا

بختِ بیدار !  نہ تقدیر رسا ۔۔ مانگی ہے

نہ تو اشکوں کی فراوانی سے مانگی ہے نجات

اور نہ اپنے مرضِ دل کی شفا  مانگی ہے

نہ غزل کے لئے آہنگ ۔۔ نیا مانگا ہے

نہ ترنم کی نئی ۔۔ طرزِ ادا ۔۔ مانگی ہے

 

سن کے حیران ہوئے جاتے ہیں اربابِ چمن

آخرش ! ۔۔ کونسی پاگل نے دعا مانگی ہے

 

آ ! ترے کان میں کہہ دوں ائے نسیمِ سحری

سب سے پیاری مجھے کیا چیز ہے کیا مانگی ہے

 

وہ سراپائے ستم جس کا میں دیوانہ ہوں

اُس کی زلفوں کے لئے بُوئے وفا مانگی ہے




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
کہو صبا سے کہ میرا سلام لے جائے
بے کلی ہے اور دلِ ناشاد ہے
تم گُل تھے ہم نکھار ابھی کل کی بات ہے
ظالم تھا وہ اور ظلم کی عادت بھی بہت تھی
غزلیں بھی کہیں پُرغم کتنی اس پر بھی علاجِ غم نہ ہوا