اے کہ ترے جلال سے ہل گئی بزمِ کافری


04-10-2016 | جوشؔ ملیح آبادی

اے کہ ترے جلال سے ، ہل گئی بزمِ کافری

رَعشۂ خوف ۔۔ بن گیا ۔۔ رقصِ بُتانِ آذری

خشک عرب کی ریگ سے ، لہر اُٹھی نیاز کی

قلزمِ نازِ حسن میں اُف رے ۔۔ تری شناوری

اے کہ تِرا غبارِ راہ ۔۔۔ تابشِ رُوئے ماہتاب

اے کہ ترا ۔۔ نشانِ پا ۔۔ نازِشِ مَہرِ خاوری

اے کہ ترے بیان میں ۔۔ نغمۂ صلح و آشتی

اے کہ ترے سکوت میں ، خندۂ بندہ پروری

اے کہ ترے دماغ پر ۔۔۔ جنبشِ پَر تَوِ صفاء

اے کہ ترے خمیر میں ۔۔  کاوشِ نور گُستری

چھین لیں تو نے مجلسِ شرک و خودی سے گرمیاں

ڈال دی تُونے پیکرِ لات و ہُبل میں تھَرتھری

تیرے قدم پہ جبہ سا ۔۔ روم و عجم کی نخوتیں

تیرے حضور سجدہ ریز چین و عرب کی خودسری

تیرے کرم نے ڈال دی طرحِ خلوص و بندگی

تیرے غضب نے بند کی رسم و رہِ ستم گری

تیرے سخن سے دَب گئے لاف و گزاف کفر کے

تیرے نفس سے بُجھ گئی ، آتشِ سحرِ سامری

لحن سے تیرے منتظم ۔۔ پست و بلند کائنات

ساز سے تیرے مُنضبِط ، گردشِ چرخِ چنبری

چینِ ستم سے بے خبر ، تیری جبینِ دل کشی

حرفِ وفا سے تابناک ۔۔۔ تیری بیاضِ دلبری

تیری پیمبری کی یہ سب سے بڑی دلیل ہے

بخشا ۔۔ گدائے راہ کو ۔۔ تُو نے شکوۂِ قیصری

بھٹکے ہوؤں پہ کی نظر ۔۔۔ رشکِ خضر بنا دیا

راہزنوں کو دی نِدا ۔۔۔ بن گئے شمعِ رہبری

سلجھا ہوا تھا کس قدر ۔۔ تیرا دماغِ حق رسی

پگھلا ہوا تھا ۔۔ کس قدر ۔۔ تیرا دلِ پیمبری

چشمہ تیرے بیان کا ۔۔۔ غارِ حرا کی خامُشی

نغمہ ۔۔۔ ترے سکوت کا ۔۔۔ نعرۂ فتحِ خیبری

زمزمہ تیرے ساز کا ۔۔۔ لحنِ بلالِ حق نوا

صاعقہ تیرے ابر کا ۔۔۔ لرزشِ روحِ بوذری

تجھ پہ نثار جان و دل مُڑ کے ذرا یہ دیکھ لے

دیکھ رہی ہے کس طرح ۔۔ ہم کو نگاہِ کافری

تیرے گدائے بے نوا تیرے حضور آئے ہیں

چہروں پہ رنگِ خستگی ، سینوں میں دردِ بے پَری

آج ہوائے دَہر سے اُن کے سروں پہ خاک ہے

رکھی تھی جن کے فرق پر تونے کلاہِ سروری

تیرے فقیر ۔۔ اور دیں ۔۔ کوچۂ کفر میں صدا

تیرے غلام اور کریں ۔۔ اہلِ جفا کی چاکری

طرفِ کُلہ میں جن کے تھے لعل و گُہر ٹکے ہوئے

حیف اب اُن سروں میں ہے دردِ شکستہ خاطری

جتنی بلندیاں تھیں سب ہم سے فلک نے چھین لیں

اب نہ وہ تیغِ غزنوی ، اب نہ وہ تاجِ اکبری

اُٹھ کہ تیرے دَیار میں ۔۔ پرچمِ کفر کھُل گیا

دیر نہ کر کہ پڑگئی ۔۔۔ صحنِ حرم میں اَبتری

 

جوشؔ کے حالِ زار پر رحم کہ تیری ذات ہے

شعلۂ طورِ معرفت ۔۔۔۔ شمعِ حریمِ دلبری




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
اے کہ ترے جلال سے ہل گئی بزمِ کافری
نغمے بنے ہیں گریۂ پنہاں کبھی کبھی
دھوپ کھائے ہوئے کانٹوں میں بیابانوں کے
فکر ہی ٹہری تو دل کو فکرِ خوباں کیوں نہ ہو
یہ دنیا ذہن کی بازی گری معلوم ہوتی ہے