نور کس کا ہے چاند تاروں میں


11-08-2015 | اسحاق حسانؔ

نور کس کا ہے، چاند تاروں میں 

حسن کس کا ہے، آبشاروں میں 

 

 

کس کی قدرت سے، دن نکلتا ہے

حکم دنیا پہ۔۔۔ کس کا۔۔ چلتا ہے 

کون ارض و سما۔۔۔ کا خالق ہے

کون جنّ و بشر کا۔۔۔ رازق ہے

 

 

کون موت و حیات۔۔۔ دیتا ہے 

صبح دیتا ہے ۔۔۔۔۔ رات دیتا ہے

پیڑ پودے اُگائے ،ہیں کس نے

بیل بوٹے سجائے، ہیں کس نے

 

 

کس نے سورج کو روشنی دی ہے

کس نے پھولوں کو دلکشی دی ہے

کس نے کوئل کو، نغمگی دی ہے

کس نے جگنو کو۔۔ روشنی دی ہے

 

 

کس نے شاعر کو، آگہی دی ہے

علم و عرفاں کی، روشنی دی ہے

کون بلبل کو۔۔۔۔۔ ساز دیتا ہے

کیف و سوز و گداز۔۔۔۔ دیتا ہے

 

 

کون۔۔ اوجِ کمال۔۔۔ دیتا ہے 

کون۔۔ رنجِ زوال۔۔۔ دیتا ہے

یہ گواہی ہے۔۔۔ قلبِ انساں کی 

سب یہ قدرت ہے ربِّ ذیشاں کی




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
شبنم میں شراروں میں گلشن کی بہاروں میں
نور کس کا ہے چاند تاروں میں
اک معجزے سے کم نہیں ہجرت رسول کی
دینِِ حق مشکلوں میں پلتا ہے