ہم کو مٹا سکے یہ زمانے میں دم نہیں


10-08-2015 | جگرؔمرادآبادی

ہم کو مٹا سکے۔۔۔ یہ زمانے میں دم نہیں 

ہم سے زمانہ خود ہے زمانے سے ہم نہیں 

 

 

بے فائدہ الم نہیں۔۔۔۔۔ بے کار غم نہیں 

توفیق دے خُدا تو یہ۔۔۔ نعمت بھی کم نہیں 

میری زباں پہ ۔۔۔۔ شکوۂ اہلِ ستم نہیں

مجھ کو جگا دیا ۔۔۔۔۔ یہی احسان کم نہیں

 

 

یارب ہجومِ درد کو۔۔۔ دے اور وسعتیں

دامن تو کیا ابھی میری آنکھیں بھی نم نہیں

زاہد کچھ اور ہو نہ ہو، مے خانے میں مگر

کیا کم یہ ہے کہ ۔۔۔ شکوۂ دیر و حرم نہیں

 
 

مرگِ جگرؔ پر کیوں تیری آنکھیں ہیں اشکبار 

اک سانحہ ۔۔۔ صحیح مگر۔۔۔۔  اتنا  اہم نہیں




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
کبھی شاخ و سبزہ و برگ پر کبھی غنچہ و گل و خار پر
نہ اب مسکرانے کو جی چاہتا ہے
ساقی کی ہر نگاہ پہ بل کھا کے پی گیا
اک رند ہے اور مدحتِ سلطانِ مدینہ
کام آخر جذبۂ بے اختیار آ ہی گیا