سمومِ کرب و حرماں اور داغِ رنج و غم پایا


04-07-2019 | خالد فیصلؔ غازی پوری

سمومِ کرب و حرماں اور داغِ رنج و غم پایا

جہاں میں ہر طرف احباب کو مشقِ ستم پایا

وفورِ شوق میں جب بھی مژہ کو ہم نے نم پایا

صفائے دل فروغِ آرزو ہر سو رقم پایا

نہیں سب پوری ہوں گی آرزوئیں تیری دنیا میں

سراب و خواب سے بھی عرصۂ ہستی کو کم پایا

معاذ اللہ! کچھ تو فکر ہو ائے باغباں تجھ کو

شرر کو گلستاں میں ہر طرف بڑھتے قدم پایا

غنیمت جان جو کچھ بھی میسر تجھ کو آ جائے

وفا کی راہ میں با حوصلہ انساں کو کم پایا

شرابِ ناب کی ساقی گری سے مجھ کو کیا حاصل

مئے وحدت کا ہر جام و سبو رشکِ ارم پایا

ہوائے نفس و حرص و آز سے جو پاک ہو وہ دل

مقدس آستاں رشکِ جناں و جامِ جم پایا

دلوں پہ حکمرانی اہلِ دل کرتے ہیں اے فیصلؔ

انہیں کہ در پہ ہر شاہ و گدا کو ہم نے خم پایا




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
سمومِ کرب و حرماں اور داغِ رنج و غم پایا
سمومِ کرب سے جھلسی کلی معلوم ہوتی ہے
برق نے ضد میں نشیمن پہ جو ڈالیں آنکھیں