تجهے تسکینِ دل پایا تجهے آرامِ جاں پایا

محمد علی جوہرؔ
تجهے تسکینِ دل پایا تجهے آرامِ جاں پایا
نہاں بهی ہے تو کیا تجھ کو جہاں ڈهونڈا وہاں پایا
ہمیں ہر چیز میں آئی نظر یارب ادا تیری
وہ کیسے ہوں گے جن لوگوں نے تجھ کو بے نشاں پایا
کوئی نامہرباں ہو کر ہمارا کیا بگاڑے گا
کرم تو تیرا ہے ہم پر تجهے تو مہرباں پایا
ترا وہ مبتلا ناکام سمجها جس کو دنیا نے
اسی کو سرخ رو دیکها اسی کو کامراں پایا
عنادل ہیں چمن کی تیرے فصلِ گل سے بے پروا
محبت کو تری ہم نے بہارِ بے خزاں پایا
حرم میں تها ہر اک کو یوں تو تیرے عشق کا دعویٰ
جو کی تحقیق تو اکثر وہی عشقِ بتاں پایا
ہماری جان بھی حاضر ہے اس کے اک اشارے پر
کہ جس کو اک جہاں نے آپ ہی جانِ جہاں پایا
کسی کو ڈهونڈتا دیکهو خود اپنے گوشۂ دل میں
تو بس سمجهو کہ اب اس نے سراغِ لا مکاں پایا
رہا آوارۂ دیر و حرم پہلو سے بیگانہ
دل اس کا عرش و کرسی ہے کہاں ڈهونڈا کہاں پایا
جہاں ایماں ہو واں کیسے گزر ہو یاس و حرماں کا
کسی مومن کو بهی اے دل خدا سے بدگماں پایا

نہیں معلوم کیا ہو حشر جوہرؔ کا پر اتنا ہے
کہ ہاں نامِ محمدؐ مرتے دم وردِ زباں پایا

پچھلا کلام | اگلا کلام

شاعر کا مزید کلام