تجلیات تو دیوار و در سے دور نہیں


28-10-2016 | محمد حسین فطرتؔ

تجلیات تو ۔۔ دیوار و در سے دور نہیں

شبِ سیاہ ۔۔ فروغِ سحر سے دور نہیں

رہینِ منتِ جوشِ نمو ہے ۔۔ خندۂ گُل

حیات گرمیٔ خونِ جگر سے ۔۔ دور نہیں

گہر بدوش ازل سے ہے کاوشِ غواص

نہال سعیٔ متاعِ ثمر سے ۔۔ دور نہیں

نہ کیوں ہو روکشِ فردوس ۔۔ اپنا ویرانہ

بہار ۔۔ خندۂ زخمِ جگر سے ۔۔ دور نہیں

ہو نالہ سنج کوئی تو یہاں ہو شورشِ غم

فغانِ نیم شبی تو اثر سے ۔۔ دور نہیں

لگن نہ ہوتو نہ شیشہ گری نہ بت سازی

کمال ، خواہشِ عرضِ ہنر سے دور نہیں

 

تضاد ہی سے عبارت ہے شورشِ ہستی

شبِ سیاہ ۔۔۔ جمالِ سحر سے دور نہیں




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
برادرانہ تعلق جو خاک ہوتا ہے
میں سوچ رہا ہوں گلشن کی تزئین کا ساماں کیا ہوگا
درسِ اتحادِ ملت
چمن والو ملالِ آشیاں سے کچھ نہیں ہوتا
کنارے پہ دریا کے مردہ پڑا تھا