گذشتہ عہد گزرنے ہی میں نہیں آتا


27-09-2016 | جونؔ ایلیا

گذشتہ عہد ۔۔ گزرنے ہی میں نہیں آتا

یہ حادثہ بھی لکھو معجزوں کے خانے میں

 

جو رد ہوئے تھے جہاں میں کئی صدی پہلے

وہ لوگ ہم پہ مسلط ہیں اس زمانے میں




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
ائے کوئے یار تیرے زمانے گزر گئے
گذشتہ عہد گزرنے ہی میں نہیں آتا
وہ جو اپنے مکان چھوڑ گئے
سرِ صحرا حباب بیچے ہیں
کون سود و زیاں کی دنیا میں