شبنم میں شراروں میں گلشن کی بہاروں میں


08-07-2016 | اسحاق حسانؔ

شبنم میں ،  شراروں میں

صحرا کے ۔۔ نظاروں میں

منجدھار کے دھاروں میں

 

گلشن کی ۔۔ بہاروں میں

گردوں کے ستاروں میں

دریا کے ۔۔ کناروں میں

     

ہر شئے میں ترا جلوہ

ہر شئے میں ترا نغمہ

 

ساون کی ۔۔گھٹاؤں میں

جاں بخش ۔۔ فضاؤں میں

بلبل کی ۔۔۔ نواؤں میں

 

مستانہ ۔۔۔ ہواؤں میں

کوئل کی ۔۔صداؤں میں

اور میری ۔۔ دعاؤں میں

     

ہر شئے میں ترا جلوہ

ہر شئے میں ترا نغمہ

 

کامل کے ۔۔ کمالوں میں

شاعر کے ۔۔ خیالوں میں

منطق کے۔۔سوالوں میں

 

فاضل کے۔۔مقالوں میں

عرفاں  کے اُجالوں میں

اور ماہ ۔۔۔ جمالوں میں

     

ہر شئے میں ترا جلوہ

ہر شئے میں ترا نغمہ




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
اک معجزے سے کم نہیں ہجرت رسول کی
شبنم میں شراروں میں گلشن کی بہاروں میں
نور کس کا ہے چاند تاروں میں
دینِِ حق مشکلوں میں پلتا ہے