ہو ورد صبح و مسا لا الہ الا اللہ


16-04-2016 | اقبالؔ سعیدی

ہو ورد صبح و مسا ۔۔ لا الہ الا اللہ

پیامِ حق کی صدا ۔۔  لا الہ الا اللہ

جہاں میں ہرسو ہدایت کی روشنی پھیلے

ہے نورِ حق کی ضیا ۔۔۔ لا الہ الا اللہ

فضا میں کلمۂ حق روزگونجتاہی رہے

یہی ہے میری دعا ، لا الہ الا اللہ

جہاں پہ آئے تغیر بفضلِ ربِّ کریم

ہو سب کے لب کی نوا لا الہ الا اللہ

نوازشات اُسی کی ہیں زندگی کے لئے

یہ ہے اُسی کی عطا ۔۔ لا الہ الا اللہ

ہیں روزوشب مہ و خورشید نعمتیں اس کی

کرم ہے ۔۔ بیش بہا ۔۔ لا الہ الا اللہ

وہ لاشریک ہے اس کاکوئی شریک نہیں

ہے بے نیاز خدا ۔۔۔ لا الہ الا اللہ

ہے ذرہ ذرہ جہاں کا اسی کی طاعت میں

یہ آگ ، پانی ، ہوا ۔۔  لا الہ الا اللہ

تلاش کرتی ہے ہرسمت اس کومیری نگاہ

ہے دل میں جلوہ نما ۔۔ لا الہ الا اللہ

یہ کائنات مشیت سے بس اسی کی چلے

وہی ہے سب کا خدا ۔۔ لا الہ الا اللہ

عطائے رب پہ ہمیشہ زبان شاکر ہے

ہے اس کی حمد و ثنا لا الہ الا اللہ

رسولِ پاک کا پیغام ہر نفس میں رہے

میرے نبی ۔۔ کی عطا ۔۔ لا الہ الا اللہ

 

ہمیشہ ہونٹوں پہ اقبالؔ اس کی حمد رہے

سدا ہو دل کی صدا ۔۔ لا الہ الا اللہ




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
ہو ورد صبح و مسا لا الہ الا اللہ
گلستاں پرخزاں چھائی ہوئی ہے
مصدرِ انوارِ عرفاں ہیں محمد مصطفیٰ
مرے لب پہ کوئی نوا نہیں مری دھڑکنوں میں صدا نہیں
ہم جہل کی ظلمت کو دنیا سے مٹا دیں گے