اک رند ہے اور مدحتِ سلطانِ مدینہ


24-01-2016 | جگرؔمرادآبادی

ا ِک رند ہے اور مدحتِ سلطانِ مدینہ

ہاں کوئی نظر ۔۔۔ رحمتِ سلطانِ مدینہ

دامانِ نظر ۔۔۔ تنگ ۔۔۔ و فراوانی ٔ  جلوہ

ائے طلعتِ حق ۔۔۔۔ طلعتِ سلطانِ مدینہ

ائے خاکِ مدینہ تری گلیوں کے تصدق

تو خلد ۔۔ ہے تو ۔۔  جنتِ سلطانِ مدینہ

اس طرح کہ ہر سانس ہو مصروفِ عبادت

دیکھوں میں درِ ۔۔۔۔ دولتِ سلطانِ مدینہ

اک ننگِ غمِ عشق ، بھی ہے منتظرِ دید

صدقے ترے ائے صورتِ سلطانِ مدینہ

کونین کا غم ۔۔۔ یادِ خدا ۔۔ اور شفاعت

دولت ہے یہی ۔۔۔۔ دولتِ سلطانِ مدینہ

ظاہر میں غریب الغرباء پھر بھی یہ عالم

شاہوں سے سوا ، سطوتِ سلطانِ مدینہ

اس امتِ عاصی سے ۔۔ نہ منہ پھیر خدایا

نازک ہے بہت ۔۔۔۔ غیرتِ سلطانِ مدینہ

 

کچھ ہم کو نہیں کام جگرؔ اور کسی سے

کافی ہے بس اک نسبتِ سلطانِ مدینہ




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
نہ اب مسکرانے کو جی چاہتا ہے
دردِ غمِ فراق کے یہ سخت مرحلے
اک رند ہے اور مدحتِ سلطانِ مدینہ
ساقی کی ہر نگاہ پہ بل کھا کے پی گیا
ہزاروں قربتوں پر یوں مرا مہجور ہوجانا