کلی اداس سہی پھول بے قرار سہی


07-01-2016 | محمد حسین فطرتؔ

کلی اداس سہی ۔۔۔ پھول بے قرار سہی

مرے چمن میں سسکتی ہوئی ۔۔ بہار سہی

جنونِ شوق میں ہم رہزنوں کے ساتھ چلے

ہمارے سامنے ۔۔لٹتے ہوئے ۔۔ دیار سہی

نہیں ہوں بے سر و ساماں دیارِ وحشت میں

متاعِ زیست امیدوں کا۔۔۔ اک مزار سہی

مری طرح کوئی۔۔۔ تصویر اضطراب نہیں

نسیمِ صحنِ ۔۔ چمن لاکھ ۔۔۔ بے قرار سہی

ہے یہ بھی عہدِ بہاراں کی خوشنما سوغات

مرے نصیب میں گلشن کے چند خار سہی

ہوئے ہیں عشق میں نباض کائنات و حیات

ہمارا ۔۔۔ دامنِ ادراک ۔۔۔ تار تار سہی

مرے لہو کی عجب کیا! ۔۔۔  بہار آجائے

شگفتِ گل کا ۔۔ عنادل کو ۔۔ انتظار سہی

صبا کو۔۔۔ مایۂ تحسیں ملی ہے گل چیں سے

صبا سے ۔۔ دامنِ گل لاکھ۔۔ تار تار سہی

 

جنونِ شوق میں گرمِ سفر ہوں جانبِ دشت

گل و بہار کو ۔۔ فطرتؔ کا ۔۔۔ انتظار سہی




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
میں سوچ رہا ہوں گلشن کی تزئین کا ساماں کیا ہوگا
اگر خدمتِ خلق کی ہو سعادت
واعظ یہ نہیں ہے وقتِ طرب اٹھ باندھ کمر دستار اٹھا
برادرانہ تعلق جو خاک ہوتا ہے
تجلیات تو دیوار و در سے دور نہیں