دینِِ حق مشکلوں میں پلتا ہے


26-11-2015 | اسحاق حسانؔ

دینِِ حق۔۔۔ مشکلوں میں پلتا ہے

یہ دیا ۔۔۔ آندھیوں میں جلتا ہے

ٹھوکریں ۔۔۔ سنگِ میل ہوتی ہیں

آدمی  گِر کے ۔۔۔۔ ہی سنبھلتا ہے

عقل اُس وقت سب کو آتی ہے

وقت جب ۔۔۔ ہاتھ سے نکلتا ہے

جس کے دل میں ہو عزم چلنے کا

وہ شراروں پہ ،  ہنس کے چلتا ہے

وقت آتا ہے ۔۔ جب ہدایت کا

میکدے  سے ۔۔۔۔ ولی  نکلتا  ہے

میرے  آگے ۔۔  وہی ہے  دانشمند

موت سے  پہلے ۔۔  جو سنبھلتا ہے

 

خونِ فنکار ہی سے اے حسّانؔ

شاعری  کا ۔۔  چراغ  جلتا  ہے




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
دینِِ حق مشکلوں میں پلتا ہے
شبنم میں شراروں میں گلشن کی بہاروں میں
اک معجزے سے کم نہیں ہجرت رسول کی
نور کس کا ہے چاند تاروں میں