کام آخر جذبۂ بے اختیار آ ہی گیا


24-11-2015 | جگرؔمرادآبادی

کام ۔۔۔۔ آخر جذبۂ ۔۔۔۔۔ بے اختیار آ ہی گیا

دل کچھ اس صورت سے تڑپا اُن کو پیار آ ہی گیا

جب نگاہیں اُٹھ گئیں اللہ رے۔۔ معراجِ شوق

دیکھتا کیا ہوں ۔۔۔۔۔  وہ جانِ انتظار آ ہی گیا

ہائے یہ حسنِ تصور ۔۔۔۔ کا فریبِ رنگ و بو

میں یہ سمجھا جیسے ۔۔۔۔ وہ جانِ بہار آ ہی گیا

ہاں سزا دے ائے خدائے عشق ائے توفیقِ غم

پھر زبانِ بے ادب پر ۔۔۔۔ ذکرِ یار آ ہی گیا

اس طرح خوش ہوں کسی کے وعدۂ فردا پہ میں

در حقیقت ۔۔۔ جیسے مجھ کو ۔۔۔  اعتبار آ ہی گیا

ہائے ! کافر دل کی یہ کافر ۔۔۔ جنوں انگیزیاں

تم کو پیار آئے نہ آئے ، مجھ کو پیار آ ہی گیا

درد نے کروٹ ہی بدلی تھی کہ دل کی آڑ سے

دفعتاً ۔۔ پردہ اُٹھا اور ۔۔۔۔ پردہ دار آ ہی گیا

دل نے اک نالہ کیا آج اس طرح دیوانہ وار

بال بکھرائے کوئی ۔۔۔۔۔ مستانہ وار آ ہی گیا

 

جان ہی دے دی جگرؔ نے آج کوئے یار پر

عمر بھر کی بے قراری ۔۔ کو قرار آ ہی گیا




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
نہ اب مسکرانے کو جی چاہتا ہے
ساقی کی ہر نگاہ پہ بل کھا کے پی گیا
کام آخر جذبۂ بے اختیار آ ہی گیا
اک رند ہے اور مدحتِ سلطانِ مدینہ
کسی صورت نمودِ سوزِ پنہانی نہیں جاتی