چمن کو اپنا لہو پلایا نمودِ برگ و ثمر سے پہلے


12-09-2015 | محمد حسین فطرتؔ

چمن کو اپنا ۔۔۔۔۔ لہو پلایا ۔۔۔۔۔۔ نمودِ برگ و ثمر سے پہلے

گلوں میں یہ رنگ و نور کب تھا۔۔۔ ہمارے خون جگر سے پہلے

 

میں کام۔۔ لیتا تھا ہر قدم پر۔۔۔۔۔۔ جنونِ ذوقِ سفر سے پہلے

وہ مٹ گیا ۔۔۔۔ راہبر کو پاکر ۔۔۔۔ جو لطف تھا راہبر سے پہلے

 

گمانِ صیاد۔۔۔۔ درحقیقت ۔۔۔۔ تھا مری ۔۔۔ پرواز کا محرک

پروں کو دیتا ہوں اپنے حرکت ۔۔۔ میں باغباں کی نظر سے پہلے

 

مرے لئے۔۔ آگ تھا گلستاں۔۔۔ مرے لئے۔۔رہگذر تھا دریا

جنوں کی شاہی مجھے تھی حاصل ۔۔۔۔ خیالِ نفع و ضرر سے پہلے

 

بغیر۔۔۔ تدبیر و جستجو ۔۔۔۔ کے محال ہے ۔۔۔۔۔ بامراد ہونا

کہ بحر میں ۔۔ ڈوبنا ہے لازم ۔۔۔۔ حصولِ لعل و گہر سے پہلے

 

شکستہ پر ہوکے۔۔ نوحہ کرنے کا۔۔۔۔ کوئی موقع نہیں رہا اب

زباں ہی گلچیں نے کاٹ ڈالی ، مرے حسیں بال و پر سے پہلے

 

رہِ طلب میں وساوسِ دلِ سے۔۔۔۔ بڑھ کے کوئی نہیں مزاحم

قدم مرے تیز تھے نہایت ۔۔۔۔ گمان و خوف و خطر سے پہلے

 

یہ دور تو ۔۔ دورِ ارتقا ہے ۔۔۔۔ مگر نہیں ہے ۔۔ سکونِ خاطر

تھا کتنا ۔۔۔۔ آسودہ حال انساں ۔۔۔۔ کمالِ علم وہنر سے پہلے

 

حیات کو۔۔۔ سازگار ماحول۔۔۔۔ کی ضرورت ۔۔۔ رہی ہمیشہ

چمن سے رخصت ہوئے عنادل چمن میں رقص و شرر سے پہلے




پچھلا صفحہ | اگلا صفحہ



شاعر کا مزید کلام
چمن کو اپنا لہو پلایا نمودِ برگ و ثمر سے پہلے
محبوبِ کبریا سے میرا سلام کہنا
درسِ اتحادِ ملت
چمن والو ملالِ آشیاں سے کچھ نہیں ہوتا
واعظ یہ نہیں ہے وقتِ طرب اٹھ باندھ کمر دستار اٹھا