مسند نشینِ عالمِ امکاں تمہیں تو ہو

اخترؔ شیرانی
مسند نشینِ عالمِ امکاں تمہیں تو ہو
اس انجمن کی شمعِ فروزاں تمہیں تو ہو
دنیائے ہست و بود کی زینت تمہیں سے ہے
اس باغ کی بہار کا ساماں تمہیں تو ہو
روشن ہے جس کی ضو سے شبستانِ زندگی
وہ ماہِ نیم ماہِ درخشاں تمہیں تو ہو
دنیا کی آرزو میں فنا آشنا ہیں سب
جو روحِ زندگی ہے وہ ارماں تمہیں تو ہو
تم کیا ملے کہ دولتِ ایماں ملی ہمیں
ایمان کی تو یہ ہے کہ ایماں تمہیں تو ہو
صبحِ ازل سے شامِ ابد تک ہے جس کا نور
وہ جلوہ زارِ حسنِ درخشاں تمہیں تو ہو
اخترؔ کو بے نوائیِ دنیا کی فکر کیا
ساماں طرازِ بے سر و ساماں تمہیں تو ہو

پچھلا کلام | اگلا کلام

شاعر کا مزید کلام