سلام ائے آمنہ کے لال ائے محبوبِ سبحانی

حفیظؔ جالندھری
سلام ائے آمنہ کے لال ائے محبوبِ سبحانی
سلام ائے فخرِ موجودات فخرِ نوعِ انسانی
سلام ائے ظلِ رحمانی سلام ائے نورِ یزدانی
ترا نقشِ قدم ہے زندگی کی لوحِ پیشانی
ترے آنے سے رونق آ گئی گلزارِ ہستی میں
شریکِ حالِ قسمت ہو گیا پھر فضلِ ربانی
زمیں کا گوشہ گوشہ نور سے معمور ہو جائے
ترے پَرتو سے مل جائے ہر اک ذرے کو تابانی
تری صورت تری سیرت ترا نقشہ ترا جلوہ
تبسم گفتگو بندہ نوازی خندہ پیشانی
ترا در ہو مرا سر ہو مرا دل ہو ترا گھر ہو
تمنا مختصر سی ہے مگر تمہید طولانی

سلام ائے آتشیں زنجیرِ باطل توڑنے والے
سلام ائے خاک کے ٹوٹے ہوئے دل جوڑنے والے

پچھلا کلام | اگلا کلام

شاعر کا مزید کلام