رودادِ محبت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے

ساغرؔ صدیقی
رودادِ محبت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
دو دن کی مسرت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں
وہ ہوش کی ساعت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
اب وقت کے نازک ہونٹوں پہ مجروح ترنّم رقصاں ہے
بیداد مشیت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
احساس کے میخانے میں کہاں اب فکر و نظر کی قندیلیں
آلام کی شدت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
کچھ حال کے اندھے ساتھی تھے کچھ ماضی کے عیار سجن
احباب کی چاہت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
کانٹوں سے بھرا ہے دامنِ دل شبنم سے سلگتی ہے آنکھیں
پھولوں کی سخاوت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے

اب اپنی حقیقت بھی ساغرؔ بے ربط کہانی لگتی ہے
دنیا کی حقیقت کیا کہئے کچھ یاد رہی کچھ بھول گئے

پچھلا کلام | اگلا کلام

شاعر کا مزید کلام